33

سری لنکا کی برقع پر پابندی، مدارس کو بند کرنے کا فیصلہ

سری لنکا نے پبلک مقامات پر مسلمان خواتین کے برقع پہننے پر پابندی اور ایک ہزار سے زائد مدارس بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے.رطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق مطابق سری لنکا کے پبلک سیکیورٹی کے وزیر سراتھ ویرا سیکارا نے پریس کانفرنس میں برقع پر پابندی اور ملک بھر میں ایک ہزار اسلامی اسکول بھی بند کرنے کا اعلان کیا.ویراتھ ویراسیکرا نے کہا ہے کہ نے کہا کہ شروع میں مسلمان خواتین برقع نہیں پہنتی تھیں لیکن اب برقع مذہبی انتہا پسندی کی علامت ہے اور اس پر جلد پابندی عائد کرنے والے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ فیصلہ قومی سلامتی کے پیش نظر کیا ہے۔

سری لنکن وزیر نے کہا کہ اسلامی سکولوں کو بند کرنے کے لئے منصوبہ بندی کی جارہی ہے. نئی قومی تعلیمی پالیسی کا تعین بھی کیا جارہا ہے جس کے بعد سری لنکا میں اپنا اسکول کھولنے کی اجازت نہیں ہوگی.پابندی عائد ہونے کے بعد ایک ہزار سے زائد اسلامک اسکول بند کیے جائیں گے۔

رئیر ایڈمرل سراتھ ویراسیکارا نے بتایا کہ میں نے پابندی کے دستاویزات پر دستخط کردیے ہیں جس کی اب کابینہ سے منظوری لی جائے گی۔سری لنکا میں اس سے قبل 2019 میں بھی برقع پر پابندی لگائی گئی تھی۔خیال رہے کہ سری لنکا میں مسلمان اقلیت میں ہیں اور گزشتہ کئی ماہ سے کورونا سے جاں بحق مسلمانوں کی میتوں کو جلانے پر سراپا احتجاج تھے اور وزیراعظم عمران خان کی درخواست پر واپس لیا گیا تھا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں