108

مارکیٹ میں چینی کا وافر اسٹاک موجود ہے، حسان خاور

ترجمان حکومت پنجاب حسان خاورنے کہا ہے کہ مارکیٹ میں چینی کا وافر اسٹاک موجود ہے، سپلائی کی شارٹیج نہیں ہے۔

معاون خصوصی وزیرِاعلیٰ پنجاب برائے اطلاعات حسان خاورنے کہا کہ مارکیٹ میں درآمد شدہ چینی آج بھی نوے روپے فی کلو کے حساب سے مل رہی ہے۔ حکومت نے ایک لاکھ دس ہزار ٹن چینی لِفٹ کر لی ہے۔ اس میں سے 52 ہزار ٹن فروخت ہو چکی ہے اور30 ہزار ٹن حکومت کے اسٹاک میں موجود ہے۔

اپنے بیان میں انھوں نے کہا ہے کہ 23 ہزار ٹن چینی کراچی سے آ رہی ہے، 34 ہزار ٹن لنگر انداز بحری جہازوں میں موجود ہے جب کہ یوٹیلیٹی اسٹورز پر 30 ہزار ٹن کا اسٹاک موجود ہے۔ اس کے علاوہ پرائیویٹ اسٹاک میں بھی چالیس سے پچاس ہزار ٹن تک چینی دستیاب ہے۔

حسان خاور کا کہنا ہے کہ کرشنگ سیزن شروع ہونے تک چینی کا اسٹاک ضروریات کے لیے کافی ہے۔ عوام سے درخواست ہے کہ درآمد شدہ چینی استعمال کریں۔ وفاق اورپنجاب حکومت چینی پر پانچ ارب روپے کی سبسڈی دے رہی ہے۔

پنجاب حکومت کے ترجمان کا کہنا ہے کہ لوکل چینی کی گراں فروشی پر حکومت سخت ایکشن لے رہی ہے۔ پہلے گراں فروشی پر حکومت شوگر ملوں کا اسٹاک اٹھا لیتی تھی۔ اب یہ معاملہ عدالت میں زیر سماعت ہونے کے باعث ایسا نہیں کیا جا سکتا۔ حکومت اپنا کیس عدالت میں بھرپور طریقے سے پیش کرے گی۔

معاونِ خصوصی وزیراعلٰی پنجاب کا کہنا ہے کہ حکومت ڈیلرز اور بروکرز کے خلاف بھرپور ایکشن لے رہی ہے۔ اگر مل مالکان بھی گراں فروشی میں ملوث ہوئے تو بلا تفریق کارروائی کی جائے گی۔ کچھ ملوں کو ریکارڈ مہیا نہ کرنے پر سیل بھی کیا جا چکا ہے۔

حسان خاور کا مزید کہنا ہے کہ سندھ کا کرشنگ سیزن اکتوبر یا نومبر کے آغاز میں شروع ہوتا تھا۔ اس سال کرشنگ سیزن میں تاخیرکرکے سندھ مصنوعی بحران پیدا کر رہا ہے۔ حکومت بہت جلد اس مشکل صورتحال پر قابو پا لے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں