109

موٹرسائیکل کی قیمتوں میں ایک ہزار سے 16 سو روپے کا اضافہ

کراچی: اٹلس ہونڈا لمیٹڈ (اے ایچ ایل) نے گزشتہ7 ماہ میں ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں بہتری کی وجہ سے کم درآمدی لاگت کے باوجود موٹرسائیکل کی قیمتوں میں ایک ہزار سے 16 سو روپے کا اضافہ کردیا۔

ایک ڈیلر نے بتیا کہ نئی قیمتیں یکم اپریل سے لاگو ہوں گی اور ماضی کی طرح کمپنی نے قیمتوں میں اضافے کی کوئی وجہ نہیں بتائی۔

کراچی: اٹلس ہونڈا لمیٹڈ (اے ایچ ایل) نے گزشتہ7 ماہ میں ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں بہتری کی وجہ سے کم درآمدی لاگت کے باوجود موٹرسائیکل کی قیمتوں میں ایک ہزار سے 16 سو روپے کا اضافہ کردیا۔

ایک ڈیلر نے بتیا کہ نئی قیمتیں یکم اپریل سے لاگو ہوں گی اور ماضی کی طرح کمپنی نے قیمتوں میں اضافے کی کوئی وجہ نہیں بتائی۔

اے ایچ ایل کی جانب سے مالی سال 21 کے 8 ماہ میں 8 لاکھ 36 ہزار 46 یونٹس فروخت ہوئے جبکہ گزشتہ مالی سال کی اسی مدت میں 7 لاکھ 194 یونٹس فروخت ہوئے تھے۔

اگست 2020 کے آخری ہفتے سے درآمد کی لاگت میں کمی واقع ہوئی ہے جب 154-155 روپے کی موجودہ شرح کے مقابلے میں ایک ڈالر 168.40 روپے کے برابر تھا لیکن موٹر سائیکل اور دیگر گاڑیوں کے اسمبلرز قیمتوں میں اضافے کا سلسلہ جاری رکھا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ہونڈا کی گاڑیوں کی قیمتوں میں 4لاکھ 25 ہزار روپے تک اضافہ

اکبر روڈ پر موٹر سائیکل ڈیلر محمد صابر شیخ نے بتایا کہ اگست 2020 سے لیکر اب تک 70 سی سی موٹرسائیکل کی قیمت میں 8 سے 9 ہزار روپے جبکہ 125-150 سی سی موٹرسائیکل کی قیمتوں میں 25 ہزار سے 50 ہزار روپے اضافہ ہوا ہے۔

ٹاپ لائن سیکیورٹیز کے تجزیہ کار شنکر تلریجا نے بتایا کہ اگست 2020 سے آج کی تاریخ تک کار کی قیمتوں میں 2 سے 7 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ سوزوکی ویگن آر کی قیمت اب 16لاکھ 40 ہزار روپے ہے جو 16 لاکھ 5 ہزار روپے تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ اسی طرح کلٹٹس 17 لاکھ 45 ہزار روپے کے بجائے 17 لاکھ 80 ہزار روپے میں فروخت ہورہی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں