35

پشتو زبان کے معروف ترقی پسند شاعر اور ادیب سلیم راز انتقال کرگئے

پشتو زبان کے معروف ترقی پسند شاعر، محقق اور ادیب سلیم راز طویل علالت کے بعد انتقال کرگئے انہیں چارسدہ کے آبائی قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا۔

خیبر پختونخوا کے ضلع چارسدہ سے تعلق رکھنے والے پشتو کے معروف شاعر محقق، ادیب، دانشور اور کالم نگار سلیم راز 82 سال کی عمر میں انتقال کر گئے، سلیم راز نے ابتدائی تعلیم مشن پرائمری اسکول بنوں سے حاصل کی، وہ پشتو عالمی کانفرنس کے بانی چیئرمین رہے اور عالمی سطح پر دو پشتو عالمی کانفرنس بھی کراچکے ہیں۔ 

ملک گیر سطح پر پاکستانی زبانوں کی ترقی پسند تنظیم عوامی ادبی انجمن پختونخوا کے کنوینر رہے، اس وقت وہ عالمی پشتو جرگہ کے چیئرمین تھے، انٹر نیشنل کانگریس آف رائٹرز کے بانی ممبر اور اکادمی ادبیات پاکستان کے تاحیات ممبر بھی تھے، ان کی شاعری میں انسانیت سے محبت اور ظلم و استحصال سے شدید نفرت کا اظہار بھی پایا جاتا ہے۔

سلیم راز کی ادبی خدمات پر انہیں 2009 میں صدارتی ایوارڈ حسن کارکردگی سے نوازا گیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں