117

کیا روزے کی حالت میں کرونا ویکسین لگوائی جا سکتی ہے؟

پاکستان، سعودی عرب، متحدہ عرب امارات اور ترکی کے مفتیان کرام نے روزے کی حالت میں کرونا ویکسین لگوانے کے حوالے سے مشترکہ فتویٰ جاری کردیا۔

پاکستان،سعودی عرب،جامع الازہر اور یوا ے ای کے دارالافتا نے فتویٰ جاری کیا، جس میں بتایا گیا ہے کہ روزے کی حالت میں کرونا ویکسین لگوانا جائز ہے۔ فتوے میں بتایا گیا ہے کہ کرونا ویکسین لگوانے سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔درالافتا پاکستان کے صدر , چیئرمین پاکستان علما کونسل اور وزیراعظم کے معاون خصوصی علامہ حافظ طاہر محمود اشرفی نے جاری اپنے بیان میں واضح کیا کہ مشترکہ فتوے کی روشنی میں روزے کی حالت میں ویکسین لگوائی جاسکتی ہے۔دارالافتا کے صدر کا کہنا تھا کہ  ہرانسان کوکروناویکسین لگوانی چاہیے۔ واضح رہے کہ دنیا بھر میں لوگوں کو وائرس سے بچانے کے لیے کرونا ویکسین لگانے کا عمل جاری ہے، پاکستان میں بھی 50 سال اور اس سے زیادہ عمر کے بزرگوں کو ویکسین لگانے کا آغاز ہوگیا ہے۔اسلامی کلینڈر کے  حساب سے شعبان المعظم کے مہینے کے بعد رمضان المبارک کا آغاز ہوگا، چونکہ شعبان کا مہینے تیزی سے اپنے اختتام کی جانب گامزن اور رمضان المبارک کی آمد آمد ہے تو فرزندان اسلام کے ذہنوں میں میں یہ سوال زیر گردش تھا کہ کیا وہ روزے کی حالت میں ویکسین لگوا سکتے ہیں؟۔قبل ازیں سعودی عرب، متحدہ عرب امارات کے مفتیان نے بھی روزے کی حالت میں کرونا ویکسین لگوانے کو  جائز  قرار  دے چکے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں